Welcome to NEWSFLASH, Your News link to Pakistan and beyond . . .
 

Urdu News Update

 

Newsflash
 

اردو رسائل و جرائد

 

Pakistan's premier  website that covers current affairs and news.

Khawateen Digest

Small house for sale in Rawalpindi

Hina Digest

ایک ایسا ملک جہاں وقت کی پابندی کو غیرمہذب سمجھا جاتا ہے

Time Magazine Subscription in Pakistan

 

Reader's Digest

The Economist Magazine PDF

 

Readers Digest

موسمیاتی تبدیلی: کیا گھریلو باغیچے یعنی کچن گارڈن ہی انسانی بقا کے ضامن ہیں؟

گھر کے باغیچے میں پھل اور سبزیاں اگانا پہلے ہی ماحول دوست سمجھا جاتا ہے لیکن موسمیاتی تبدیلی کے خلاف جنگ میں یہ ایک ہتھیار بھی بن سکتا ہے۔

 

بنگلہ دیشی کمیونٹی کو یہ تجربہ تب ہوا جب چاولوں کی فصل، جو ان کی خوراک اور آمدنی کا ذریعہ تھی، موسمی بارش کے جلدی آجانے سے برباد ہو گئی۔

جس بارش کو دو ماہ بعد آنا تھا اس نے اپریل 2017 میں وقت سے پہلے آ کر سلہٹ ڈویژن کے شمال مشرقی کھیتوں میں چاول کی ساری فصل برباد کر دی۔

کسانوں کی زیادہ تر یا پوری فصلیں اس سیلاب کی نذر ہو گئیں۔ اس کا مطلب تھا کہ ان کے خاندانوں کے لیے کوئی آمدنی نہیں رہی اور نہ کھانے کو کچھ بچا۔

 

A Special report on India's attempts to wish Kashmir issue away. Rs 50 in Pakistan

ذیابیطس: کیا ادویات کی بڑھتی قیمتیوں کی وجہ ڈالر کی قدر میں اضافہ ہے؟

سائنس دانوں نے متنبہ کیا ہے کہ موسمیاتی تبدیلی فصلوں اور ان میں موجود غذائی اجزا کو متاثر کر رہی ہے۔

 

کیا چینی کمپنی پاکستان میں جاسوسی کر رہی تھی؟ بی بی سی رپورٹ

 

پوٹس ڈیم انسٹی ٹیوٹ فار کلائمیٹ امپیکٹ ریسرچ کی پروفیسر سبائن گیبریش کہتی ہیں یہ بہت غیر منصفانہ ہے کیونکہ موسمیاتی تبدیلی میں ان لوگوں کا کوئی کردار نہیں ہے۔

نوبل فاؤنڈیشن کے زیرِ اہتمام برلن میں صحت اور آب و ہوا کے ماہرین کی ایک کانفرنس میں بی بی سی سے بات کرتے ہوئے پروفیسر گیبریش کا کہنا تھا موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے وہ لوگ بہت متاثر ہوئے ہیں کیونکہ اس صورت میں وہ اپنا ذریعہ معاش اور غذائی اجزا سے محروم ہو جاتے ہیں۔

اور ان کے بچے سب سے زیادہ متاثر ہو رہے ہیں کیونکہ وہ تیزی سے بڑھ رہے ہیں اور انھیں زیادہ سے زیادہ غذائی اجزا کی ضرورت پڑتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جلدی آنے والی بارشوں سے قبل ہی ایک تہائی خواتین اور 40 فیصد بچے غذائیت کی کمی کا شکار تھے۔

پروفیسر گیبریش کا مزید کہنا تھا یہ لوگ پہلے ہی بہت سی بیماریوں سے لڑتے بمشکل زندگی گزار رہے ہیں۔ ان کے پاس کچھ بھی نہیں ہے۔ کوئی انشورنس تک نہیں ہے۔

وہ سلہٹ ڈویژن میں آنے والے سیلاب کے اثرات پر ایک تحقیق کی رہنمائی کررہی ہیں اور وہاں کے دیہات کی 2000 سے زیادہ خواتین کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہیں۔

ان خواتین میں سے نصف نے بتایا کہ ان کے خاندان سیلاب سے بہت متاثر ہوئے ہیں۔ انھوں نے ایسے سرمایہ داروں جو سود کی زیادہ شرح وصول کرتے تھے سے قرض لے کر مشکلات سے نمٹنے کی کوشش کی۔ اس سے ان کے خاندان قرضوں میں ڈوب گئے۔

ٹیم نے کمیونٹی کو اس بات کی تعلیم دینا شروع کی ہے کہ وہ اپنے گھر کے باغات میں اونچی زمین پر زیادہ سے زیادہ مختلف اقسام کے پھل اور سبزیاں اگائیں اور مرغیاں رکھیں۔

پروفیسر گیبریش کہتی ہیں یہ ان کے چاولوں کی فصل کے خسارے کی تلافی تو نہیں کر سکتا کیونکہ یہ ان کا ذریعہِ آمدن تھا۔ لیکن کم از کم اس طرح ان کی کسی حد تک مدد ہو جائے گی۔

لیکن موسمیاتی تبدیلی کا مطلب ہے کہ ترقی پذیر ممالک کے لوگ چاولوں کے ساتھ جن دیگر نشاستہ دار غذاؤں پر انحصار کرتے ہیں، اب ان میں پہلے جسی غذائیت نہیں رہی۔

واشنگٹن یونیورسٹی کے عالمی صحت کے شعبے سے تعلق رکھنے والی پروفیسر کرسٹی ایبی نے غذائی اجزا کی سطحوں پر تحقیق کی ہے۔

اس تحقیق کے دوران انھیں معلوم ہوا کہ چاول، گندم، آلو اور جو کی فصلوں میں کاربن ڈائی آکسائیڈ کی مقدار اب زیادہ ہو گئی ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ انھیں اگنے کے لیے کم پانی کی ضرورت ہے، جو اتنی اچھی بات نہیں جتنی یہ سننے میں لگ رہی ہے۔ کیونکہ اس کا مطلب ہے کہ وہ مٹی سے کم سے کم مائیکرو نیو ٹرینٹ (پودوں کی نشو و نما کے لیے درکار غذائی مادہ) اٹھاتے ہیں۔

پاکستان کے نئے مشیرِ خزانہ عبدالحفیظ شیخ کون ہیں؟

 

Post dated  December 16, 2019

 

Share your views at myopinion@newsflash.com.pk

 

فواد چوہدری: چاند دیکھنے کا تنازع اور حکومتی وزیر کی تجویز

پاکستان : موت کی سزا پانے والے ہر پانچ میں دو بے گناہ

 

 

Want to get news alerts from newsflash.com.pk? Send us mail at

editor.newsflash@gmail.com


Copyright 2006 the Newsflash All rights reserved

This site is best viewed at 1024 x 768